کیا حضرت امیر معاویہؓ سیدنا علی کو خلافت کا اہل نہیں سمجھتے تھے؟ (مولانا علی معاویہ)

السلام علیکم و رحمۃ اللہ وبرکاتہ

قارئین کرام کچھ جھلاء سیدنا معاویہؓ کا سیدنا علیؓ سے بیعت نہ کرنے پر یہ تاثر دیتے ہیں کہ جیسے وہ سیدنا علیؓ کو خلافت کا اھل اور خلیفہ راشد نھیں سمجھتے تھے اس لیے ان کی بیعت نھیں کی۔

حالانکہ سیدنا معاویہؓ اپنے آپ سے زیادہ سیدنا علیؓ کو خلافت کا حقدار اور افضل سمجھتے تھے، انھوں نے سیدنا علیؓ سے بیعت صرف اس وجہ نھیں کی کہ وہ سیدنا عثمانؓ کا قصاص چاھتے تھے جو ان کا حق تھا۔

علامہ ذھبیؒ سیر اعلام النبلاء جلد 3 صفحہ 140 پر لکھتے ہیں کہ

جب ابومسلم خولانیؒ او کچھ لوگ سیدنا معاویہؓ کے پاس گئے اور ان سے پوچھا کہ

تم کیوں علیؓ سے جھگڑا کررھے ہو؟؟ کیا تم ان جیسے ھو؟؟

معاویہؓ نے فرمایا کہ ’’اللہ کی قسم میں جانتا ہوں کہ علیؓ مجھ سے افضل ہیں اور مجھ سے زیادہ خلافت ک حقدار ہیں، لیکن کیا تم نھیں جانتے کہ میرے چچا کے بیٹے عثمانؓ کو مظلوما قتل کیا گیا ھے؟ میں اس کا قصاص (بدلہ) چاھتا ہوں، تم علیؓ کے پاس جاؤ اور ان سے کھو کہ عثمانؓ کے قاتلین میرے حوالے کرے میں ان کا فرمانبردار بن جاؤنگا‘‘‘۔۔

نوٹ۔۔ اس کی سند کے بارے میں حاشیہ مین ھے ’’رجالہ ثقات‘‘، اس کے راوی ثقہ ہیں۔

دیکھیں کتنے واضح بات ھے سیدنا معاویہؓ کی۔

اگر کوئی لاعلم یہ سوال کرے کہ معاویہ کس حیثیت سے قصاص کا مطالبہ کیا؟؟ وہ تو قصاص کا مطالبہ کرہی نھیں سکتا۔

تو تفصیل مین جائے بغیر میں اس سے یہ سوال کرونگا کہ یہ سوال تم سیدنا علیؓ سے صحیح سند سے ثابت کرکے دکھاؤ کہ حضرت امیر معاویہؓ نے جب سیدنا علیؓ سے قصاص عثمانؓ کا مطالبہ کیا تھا اور وہ مطالبہ غلط تھا بقول تمھارے، تو سیدنا علیؓ نے ان پر یہ اعتراض کیون نہ کیا؟؟

جب علیؓ نے یہ اعتراض نھیں کیا تو کیا تمھارا حضرت امیر معاویہؓ پر یہ اعتراض کرنا تمھاری جہالت کی دلیل نہیں؟؟

اللہ سے دعا ھے اللہ ان کو ھدایت عطا فرمائے۔