مسئلہ تحریف قرآن (ممتازقریشی/ابوھشام ) قسط 1

گذشتہ دنوں شیعہ عالم سے تحریف قرآن پر تفصیلی گفتگو ہوئی۔ اصول کافی کی ایک صحیح السند روایت اور اس کی توثیق کی روشنی میں کی گئی گفتگو مکمل دیانتداری کے ساتھ اصل اسکینز اور دلائل اور وضاحتوں کو شامل کر کے پانچ قسطوں میں محفوظ کردی گئی ہے۔ 

عوام الناس کی آگاہی کے لئے اور شیعیت کا اصل چہرہ بے نقاب کرنے کے لئے اس سلسلے کو شروع کیا جا رہا ہے۔ 

پہلی قسط بمعہ اہم نکات ملاحظہ فرمائیں۔

🔴قسط 1 خلاصہ🔴 

♦️اہل سنت مؤقف:

اہل تشیع کی صحیح السند روایت میں تحریف القرآن کا بیان ہونا اور اس روایت کی توثیق اور وضاحت میں شیعہ جیّد علماء کا اقرار کہ قرآن کریم میں نقص، تغییر ہوا ہے اور قرآن کا کچھ حصہ ساقط کردیا گیا ہے۔ 

♦️شیعہ عالم سے سوال:

اگر شیعہ تحریف قرآن کا عقیدہ نہیں رکھتے تو صریح تحریف بیان کرنے والی روایات کی توثیق اور تحریف کی تائید شیعہ جیّد علماء نے کیوں بیان کی ہے؟ جبکہ شیعہ اصول کے مطابق قرآن کے خلاف کوئی روایت قبول نہیں کی جاتی۔

♦️شیعہ عالم ابوھشام نے پہلے صورت اور علمی حیثیت پر تنقید کی۔ داڑھی کی اہمیت بتاتے ہوئے مجھے فاسق کہہ کر اپنے حسن اخلاق کا مظاہرہ کیا۔

میں نے ان کا شکریہ ادا کیا اور تسلیم کیا کہ نہ صرف سنت بلکہ فرائض پر بھی عمل درآمد میں کوتاہیاں ہوتی ہیں اور بقول قرآن انسان سراسر خسارے میں ہے اور اپنی جانوں پر ظلم کرتا ہے۔ 

اس کے بعد یہ شکایت ختم کر کے ابوھشام کو اصل اختلافی موضوع پر گفتگو کرنا تھی، لیکن اس کے بعد ابوھشام اس فکر میں رہے کہ میں اہل تشیع کتب کے بارے میں کیا جانتا ہوں، شیعہ اصول حدیث کونسے ہیں۔ مجھے عربی آتی ہے کہ نہیں، اعراب کے ساتھ عربی پڑھ سکتا ہوں یا نہیں؟ وغیرہ وغیرہ

♦️قسط 1 میں ابوھشام کے لرزہ خیز اعترافات:

1️⃣ قول معصوم کی تصحیح اور تحریف قرآن کا اقرار کرنے والے علماء کو ان کی ذاتی رائے قرار دے دیا، اور ان کی مذمت نہی کی! یعنی اگر کوئی شیعہ قرآن میں تحریف کا قائل ہو تو کوئی مسئلہ نہیں، اس کی مرضی ہے جو چاہے سمجھتا رہے!!

2️⃣ اہل تشیع کے ہاں سند ثانوی حیثیت رکھتی ہے، بلکہ کوئی اہمیت نہیں رکھتی، اصل اہمیت متن کی ہے ، سند ضعیف بھی قبول ہے ۔

♦️قسط 1 میں ابوھشام نے مندرجہ ذیل باتیں کہہ کر وقت ضایع کیا۔

– ذاتی حملے اور فریق مخالف کی علمیت پر بار بار تنقید۔

– کسی اور مناظرے کا قصہ۔

– دفاع سے پہلے اہل سنت پر جوابی اعتراضات۔

♦️ قسط 1 میں شیعہ عالم کا اعتراض جس کا فورآ تحقیقی رد پیش کردیا گیا۔

– بسم اللہ کی حیثیت پر علماء اہل سنت کا اختلاف تحریف قرآن ہے!! معاذاللہ (ابوھشام)

بسم اللہ کی حیثیت پر علمائے اہل سنت کے باہمی اختلاف (ایک تحقیق)

سب سے پہلے اس مشہور اختلاف کو سمجھتے ہیں کہ علمائے اہل سنت کے درمیان یہ اختلاف اصل میں کیا ہے۔

سب سے پہلے یہ بات واضح ہوجائے کہ

♦️ اہل سنت کے تمام علماء کرام اور اہل تشیع کے تمام علمائے کرام کا اس پر مکمل اتفاق ہے کہ 

👈 آیت (بسم اللہ الرحمن الرحیم) قرآن پاک کی سورہ نمل کی ایک آیت ہے۔ 

” انہ من سلیمن وانہ بسم اللہ الرحمن الرحیم “

(سورت نمل 30)

👈 اس کے علاوہ تمام مسالک کے تمام علمائے کرام کی ایک ہی رائے ہے کہ نبی کریم اور صحابہ کرام نے اللہ کی کتاب کو بسم اللہ الرحمن الرحیم  سے شروع کیا۔

🔴 اس حقیقت سے اہل تشیع کا انکار اور بار بار صراحت سے یہ کہنا کہ  امت کی اکثریت بسم اللہ کی منکر ہے، نہ صرف بدنیتی، بلکہ واضح طور پر تمام مسالک کے تمام علمائے کرام بشمول اہل تشیع علمائے کرام کی رائے کو بھی رد کرنا ہے۔

اب آتے ہیں اس مؤقف یا استدلال پر جو اہل تشیع عام طور پر پیش کر کے امت مسلمہ پر بہتان لگاتے ہیں کہ وہ تحریف قرآن کی قائل ہے۔ (معاذاللہ ثم معاذ اللہ)

👈 بسم اللہ کی حیثیت پر علمائے اہل سنت کے بیچ یہ اختلاف ہرگز نہیں کہ بسم اللہ قرآن پاک کی آیت ہے یا نہیں، کیونکہ سورت نمل کی آیت 30 کا انکار کوئی بھی نہیں کرتا۔

 ♦️ بسم اللہ کی ہر سورت سے پہلے موجودگی: یہ بات بھی متفق علیہ فریقین ہے کہ قرآن پاک حفاظ کے ذریعہ اور تحریری صورت میں دور نبوی سے آج تک ہر دور میں متواتر موجود رہا ہے۔ بسم اللہ بھی قرآن پاک میں ہر سورت سے پہلے لکھی اور پڑھی جاتی رہی ہے۔ 

👈 یہاں تک یہ بات کلیئر ہوگئی کہ بسم اللہ بحیثیت آیت یا بحیثیت ہر سورت سے پہلے موجودگی کا منکر پوری امت مسلمہ میں کوئی بھی نہیں اور اس بنیاد پر امت کی اکثریت پر تحریف قرآن کا الزام لگانا خیانت کے سوا کچھ نہیں۔

♦️ بسم اللہ کے مسئلہ پر آخر اختلاف کس بات پر ہے ؟

جو بسم اللہ ہر سورت سے پہلے لکھی اور پڑھی جاتی ہے ، اس کی “حیثیت” کے متعلق علمائے کرام کی تین مختلف آراء ہیں۔

1️⃣ بسم اللہ ہر سورت کے شروع میں خود مستقل آیت ہے۔ 

2️⃣ بسم اللہ ہر سورت کی ایک مستقل آیت ہے جو اس کے شروع میں لکھی گئی ہے یعنی ہر سورت کی پہلی آیت ہے۔

3️⃣ بسم اللہ صرف سورہ فاتحہ ہی کی آیت ہے اور دوسری سورتوں کی نہیں،یعنی ایک سورت کو دوسری سورت سے جدا کرنے کے لئے نبی کریم نے لکھوائی ہے۔

👈 ان تمام حقائق سے یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ بسم اللہ کی “حیثیت” پر علمائے اہل سنت کے بیچ اختلاف رائے ہرگز ہرگز تحریف قرآن کے زمرے میں نہیں آتی۔

اس پر مزید دلائل بھی پیش کئے جاتے ہیں۔

♦️ ہر سورۃ کے آغاز میں بسم اللہ، اس سورۃ کا حصہ ہے یا نہیں ہے، اس سے قرآن کی ’’اصل حیثیت‘‘ پر کوئی فرق نہیں پڑتا۔ الحمدلللہ قرآن پاک الحمد سے لے کر والناس تک اُسی صورت میں من و عن موجود ہے، جس طرح کہ یہ نازل ہوا تھا۔

♦️ ابتدا میں جب قرآنی مصحف کو تحریری صورت میں یکجا کیا گیا تھا تو نہ تو اس پر اعراب موجود تھے، نہ ہی ہر آیت پر نمبر شمار لگائے گئے تھے۔ بلکہ بعض اسکالرز کے مطابق تو ابتدائی نصخوں میں تو تمام حروف بھی ’’غیر منقوط‘‘ (بغیر نقطوں والے) تھے۔ 

♦️ زمانہ کے ساتھ ساتھ قرآن پاک کو محفوظ کرنے کے لئے حفاظ کو یاد شدہ قرآن کے عین مطابق بعض حروف میں نقطے لگا کرغیر منقوط حروف سے الگ کردیا گیا تاکہ بعد میں آنے والے مسلمان قرآن کو اصل قرآت کے ساتھ پڑھ سکیں۔

♦️ اسی طرح یہ تو سب ہی جانتے ہیں کہ قرآن مین اعراب بھی بہت بعد میں لگائے گئے۔ لیکن ان اعراب کے لگانے سے قرآن کی اصل قرآت پر کوئی فرق نہین پڑا۔

♦️ یہی معاملہ آیات کے نمبر شمار کا ہے۔ جب قرآنی آیات پر نمبر شمار لگائی گئیں تو الگ الگ ادوار یا علاقوں میں تین مختلف طریقےاختیار کئے گئے۔ 

1️⃣ ایک میں ہر سورت کے آغاز میں لکھی ہوئی بسم اللہ کو بھی نمبر شمار دیا گیا۔ 

2️⃣ دوسری میں ایسا نہیں کیا گیا 

3️⃣ تیسری میں یہ بھی اختلاف ہے کہ بعض لوگوں میں اس امر پر بھی اختلاف تھا کہ ایک آیت مقام الف پر ختم ہوتی ہے یا مقام ب پر ۔ 

♦️ اس طرح قرآن کے کل آیات کی تعداد بھی تین مختلف بیان کی جاتی ہیں۔ لیکن ان تین مختلف ’’کل نمبر شمار‘‘ کے باوجود قرآن پاک کا معجزہ ہے کہ ان سب مختلف نسخوں میں قرآنی آیات، الفاظ، بلکہ حروف تک سب میں یکساں ہیں۔

ان دلائل سے بھی یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ بسم اللہ کی ہر سورت سے پہلے موجودگی کا منکر کوئی بھی نہیں، بلکہ اس کو ہر سورت کا حصہ سمجھنا یعنی پہلی آیت، یا الگ سے مستقل آیت سمجھنا وغیرہ ہر دور میں موجب اختلاف بنا رہا۔ 

👈 بسم اللہ کی حیثیت پر مختلف آراء ہونے کے باوجود یہ مسئلہ کبھی بھی اور کسی بھی دور میں تحریف قرآن نہیں سمجھا گیا اور نہ کبھی اس مسئلہ پر فتنہ یا فساد ہوا۔

👈 میں نے اہل تشیع کی کئی تفاسیر بھی چیک کی ہیں اور کسی ایک میں بھی بسم اللہ پر اختلاف رائے کو تحریف قرآن نہیں بیان کیا گیا۔

♦️ قسط 1 میں ابوھشام کے دعوے جو آخر تک ثابت نہ کئے جاسکے۔

– علمائے اہل سنت نص کے ہوتے ہوئے اجتہاد کر کے تحریف قرآن کو تسلیم کرتے ہیں۔

– صحیحین میں ایسی روایات ہیں جو کھلم کھلا قرآن کی مخالفت میں ہیں!

– اہل سنت کے عقائد قرآن کریم کے خلاف بنائے گئے ہیں۔

وڈیو ڈاؤن لوڈ کریں

آڈیو ڈاؤن لوڈ کریں

♦️ قسط 1 میں شیعہ عالم سے پوچھے گئے اہم سوال جن کے جوابات قسط 2 میں ملاحظہ فرمائیں۔

1️⃣ کیا موجودہ قرآن کریم پر شیعہ مکمل ایمان رکھتے ہیں؟

2️⃣ شیعہ کے ہاں موجودہ قرآن کریم تحریف سے پاک ہے؟

3️⃣ تحریف قرآن کے قائل کو شیعہ کافر، مرتد سمجھتے ہیں یا نہیں؟

 (جاری ہے)