فیصلہ فدک در جواب مقدمہ فدک

🔴فیصلہ فدک در جواب مقدمہ فدک🔴

قسط۔1

چند دن پہلے ایک عورت ٹی وی شو پر حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے شان میں گستاخانہ الفاظ استعمال کرتی ہے کہ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ حضورﷺ کی بیٹی حضرت فاطمہ رضی اللہ عنہا کا حق کھا گئے انہیں انصاف نہیں ملا نعوذباللہ تو اس کے بعد اہلسنّت کی طرف سے عدالت میں توہین صحابہ کی درخواست دی گئی جس کو دیکھ کر ایک شاطر قسم کے حق علی نامی روافضی شیعہ نے فرضی طور پر ایک تحریری مقدمہ فدک تیار لکھا جس کو پڑھ کر شیعہ وکیل علی حق اور جج دونوں ہی جاہل اور لاعلم کے ساتھ ہونے کے سنی وکیل عمر فاروق کو بلکل کمزور کردار پیش کیا اور مدعی عبدالرحمن معاویہ کو ہر جگہ کمزور اور واقعہ فدک سے ناواقف پیش کرتے بار بار صحابہ کرام کے خلاف زبان درازی کی اب ہم اس فرضی اور جھوٹی گستاخانہ عدالت کو حقیقی عدالت کا رنگ دیتے ہوے فیصلہ فدک در جواب مقدمہ فدک لکھ کر حقائق سے پردہ اٹھاتے ہیں کہ کیسے ان روافض قدیم دشمن اسلام کو دین اسلام سے بغض نفرت اور صحابہ کرام کی توہین ان کے سینوں و زبانوں سے نکلتی ہے۔

📢نوٹ: ہمارے اس فیصلہ فدک کا رد لکھنے کے لیے اگر کسی رافضی شیعہ کا علمی جوش اُبھرے تو ہمارے ہر حوالے کا رد لکھیں ورنہ خوامخواہ زحمت نہ کریں

🔸مقدمہ فدک تحریر کرنے والے صاحب نے اپنے آپ کو سیفی خان کا وکیل کہا نام حق علی،
🔹مدعی عبدالرحمن معاویہ،
🔸مدعی علیہ سیفی خان،
🔹مدعی کا وکیل عمر فاروق بنایا،
♦️جج کا فرضی نام خدا بخش رکھا،

⭐آئیے اب حق علی وکیل شیعہ رافضی کی تیار کردہ عدالت کا انصاف دیکھتے ہوئے تحقیقی جائزہ لیتے ہیں

🌎پوری مسلم دنیا جانتی ہے کہ
اہلسنّت مسئلہ فدک معاملے کے قرآن کریم کی روشنی میں دو ٹوک اور واضح مؤقف رکھتے ہیں کہ یہ ملکیت “مال فئے” ہے۔ نبی کریمﷺ اور خلفائے راشدین فدک کی آمدنی اسی طرح کچھ خرچ کرتے رہے جس طرح قرآن کریم میں بیان کیا گیا ہے۔
سورت الحشر آیت 7
فدک (مال فئے) کے حصہ دار
1⃣ اللہ عزوجل
2⃣ نبی کریمﷺ
3⃣ نبی کریمﷺ کے قرابت دار
4⃣ یتیم
5⃣ حاجتمند
6⃣ مسافر
اس آیت کریمہ سے یہ واضح ہوجاتا ہے کہ مال فئے کی ملکیت نبی کریم کی ذاتی ملکیت نہیں ہوسکتی ، ورنہ اس ملکیت کے اتنے حصہ دار کیسے ممکن ہیں؟
👈 اہلسنّت کے پاس فدک کے مسئلے پر صرف ایک حدیث نبوی نہیں بلکہ بیشمار دلائل اہل سنت اور اہل تشیع کی معتبر کتب سے اقوال اہل بیت سے موجود ہیں۔

♦️حق علی وکیل شیعہ:
یہ مسئلہ طرفین کی کتب سے ثابت ہے مگر وہ اپنے دفاع میں ایک حدیث رسول پیش کرتے ہیں”

🔹جواب اہلسنّت 🔹
وکیل صاحب (حق علی) کیا اس حدیث سے منکر ہیں؟ جب اس حدیث مبارکہ کو سن کر سیدہ فاطمہ رضی اللہ عنہا خاموش ہو گئیں (خاموشی رضا مندی کی علامت ہے) اور مسئلہ ختم ہو گیا اب آپ لوگوں کو 14 سو سال سے کیوں کھلبلی مچی ہے؟ اور اگر آپ کے دماغ میں ہو کہ اس کے راوی صرف حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کو ہیں تو آپ کو معلوم ہونا چاہئے یہ حدیث حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا، حضرت عبداللہ بن عمر، حضرت عثمان، حضرت عبدالرحمن بن ابی وقاص، اور زبیر بن عوام، حضرت عباس بن عبدالمطلب، طلحہ بن عبیداللہ رضی اللہ عنہما یعنی دس صحابہ کرام نے اس حدیث کو روایت کیا ہے اگر تنہا بھی حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ اس کے راوی ہوں تب بھی یہ حدیث حجت اور امت کا ماننا لازم ہے کیوں کے سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ نے خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنی ہے

♦️وکیل شیعہ (حق علی) جج سے مخاطب ہوتے………

درخواست ایک مرتبہ پھر سے پڑھ لیں کیونکہ اسی درخواست کی بنا پر میں مدعی (عبدالرحمٰن معاویہ ) سے کچھ سوالات کرنا چاہوں گا………

جج صاحب…… : اوکے……
( عینک لگا کر جج صاحب ایک مرتبہ پھر درخواست کو غور سے پڑھتے ہیں اور کہتے ہیں کہ حق علی صاحب آپ مدعی سے سوال کرسکتے ہیں)…………

♦️وکیل شیعہ (حق علی) شکریہ جج صاحب……!

تو جناب عبدالرحمٰن معاویہ صاحب۔۔۔آپ مجھے اپنا نام بتائیں گے؟………

⚡مدعی عبدالرحمٰن معاویہ…… یہ کیسا سوال ہے؟ میرا نام عبدالرحمٰن معاویہ ہے……

♦️وکیل شیعہ (حق علی) …… سوری ٹو سے۔۔اگر آپ کو برا لگا۔۔۔میں صرف یہ جاننا چاہتا ہوں کہ آپ کے والدین نے آپ کا نام معاویہ ۔۔۔معاویہ بن ابوسفیان سے متاثر ہوکر رکھا ہے یا پھر ایسے ہی؟……

⚡مدعی عبدالرحمٰن معاویہ……جی نام اگر کسی شخصیت کے نام پر رکھا جائے تو لازمی ہے اس سے متاثر ہوکر ہی رکھا جاتا ہے اور میرے ابو جان معاویہ بن ابوسفیان سے بہت متاثر ہیں اسی لیے انہوں نے منت مانی تھی کہ اگر مجھے بیٹا ہوا تو اس کا نام معاویہ بن ابوسفیان کے نام پر عبدالرحمٰن معاویہ رکھوں گا۔ اسی لیے میرا نام عبدالرحمٰن معاویہ ہے یعنی رحمٰن کا بندہ معاویہ……

⚡(سنی وکیل عمرفاروق) …… کھڑے ہوئے اور کہا کہ جج صاحب عدالت کے وقت کو ضائع کیا جارہا ہے پرسنلی باتوں کو لے کر……
آپ فیصلہ سنائیں ساری امت مسلمہ آپ کے فیصلے کی منتظر ہے……

🔸جج صاحب……: آپ بیٹھ جائیں (عمرفاروق)۔۔۔وکیل شیعہ (حق علی) جاری رکھو۔……

♦️شکریہ جج صاحب شیعہ وکیل جج سے……
میں صرف آپ کو یہ بتانا چاہتا تھا کہ مدعی (عبدالرحمٰن معاویہ ) کس پارٹی سے متاثر ہیں اور آپ تاریخ سے اچھی طرح واقف ہیں کہ معاویہ ایسی شخصیت ہے جس کا اہل بیت سے سلوک روز روشن کی طرح واضح ہے۔ اس کا باپ (سفیان) یہ خود (معاویہ) اور اس کا بیٹا (یزید) لعن اللہ علیہم اجمعین محمدوآل محمد (ص) کے خلاف برسرمیدان رہے ہیں۔ تو ایسی شخصیت جس کا کام ہی امت میں تفرقہ پھیلانا ہےاور اسے ایک دوسرے کوجنگی حالات میں دکھیلنا ہے تو اس کے حق میں فیصلے کے اثرات آپ بہتر طور پر دیکھ سکتے ہیں۔ اس لیے میری آپ سے درخواست ہے کہ اس مسئلے پر گہری نظر ثانی کی جائے ۔ آپ کا فیصلہ ملک پاکستان کے لیے بدامنی کا سبب بھی بن سکتا ہے۔🔴

🔵قارئینِ کرام ……!
آپ نے شیعہ وکیل کی تحریر کردہ مقدمہ فدک کا انصاف دیکھا….…

🔹جواب اہلسنّت🔹
حق علی وکیل صاحب جو آپ نے جو سوال مدعی سے کیے ان کے بارے درخواست میں کچھ لکھا ہے؟……
اگر نہیں لکھا تو جج صاحب آپ کیسے اجازت دے رہے ہیں مدعی علیہ کے وکیل کو کہ وہ ایسے فضول سوال کرتا رہے آپ جج ہیں یا طرفدار……؟؟
یقیناً قصور آپ کا نہیں آپ بھی نامزد کیے ہوئے ہیں مخالف کی طرف سے ظاہر ہے ایسا ہی انصاف ہوگا،
حق علی وکیل صاحب آپ نے جو سوال یا بہتان لگائے مدعی پر آئیں زرا آپ کی آنکھوں سے پردہ اٹھاؤں شاید آپ کی مکاریوں سے عدالت کو بھی آگاہی ہو……

اگرچہ شیعہ وکیل (حق علی) صاحب آپ نے اصل موضوع پر دلیل نہیں دی ، لیکن ہم پھر بھی جواب دے دیتے ہیں……

🌀یہاں پر آپ نے تین باتوں سے اپنے مؤقف کو ثابت کرنے کی کوشش کی ہے اور دو صحابہ کرام کی صریح گستاخی بھی کی ہے۔……

1⃣ اولاد کا نام کسی شخصیت پر رکھنے کا مطلب اس سے محبت کا ہونا ہے۔……
2⃣ اولاد کے نام سے اس شخصیت کی جماعت سے تعلق ثابت ہوتا ہے۔……
3⃣ حضرت ابو سفیان رضی اللہ عنہ اور حضرت امیر معاویہ رضی عنہ کا نام یزید کے ساتھ ملا کر دعوی کیا ہے کہ انہوں نے امت مسلمہ میں تفرقہ ڈالا ہے……

🔹شیعہ وکیل صاحب آپ کی کمزور باتوں کا رد کرتا ہوں🐦…

سیدنا علی رضی اللہ عنہ نے اپنی اولاد کے نام ابوبکر، عثمان اور عمر رکھے، اس کا مطلب اہل بیت کرام کے صحابہ کرام سے پیار و محبت کے تعلقات تھے۔……

👈 وکیل شیعہ (حق علی) صاحب آپ کی منطق کے مطابق سیدنا علی رضی اللہ عنہ خلفائے ثلاثہ سے دلی محبت رکھتے تھے بلکہ ان کی جماعت سے بھی تعلق تھا۔……

👈حضرت ابو سفیان رضی اللہ عنہ کے قبول اسلام سے پہلے کے گناہ بنص قرآن اور خود نبی کریمﷺ نے معاف فرما دیئے تھے، حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ سے حسنین کریمین رضی اللہ عنہ کی بیعت اور اہل بیت کرام سے قریبی تعلقات اور تحفے تحائف لینے کا سلسلہ آخری گھڑی تک قائم رہا……

👈وکیل شیعہ (حق ) آپ کو معاویہ لفظ سے کیا تکلیف ہے اور کیوں ہے……؟
آپ نے مدعی سے سوال پوچھا کہ اپ کے والدین نے متاثر ہو کر یہ نام آپ کا رکھا آپ زرا بتائیں سیدنا علی رضی اللہ عنہ نے اپنے بچوں کے نام ابوبکر، عمر، عثمان، سیدنا ابوبکر عمر عثمان رضی اللہ عنہم سے متاثر ہو کر رکھے تھے……؟
ظاہر ہے ان کے کارناموں سے متاثر تھے تبھی اپنے بچوں کے نام رکھے بھلا کوئی دشمن کے نام پر بھی بچوں کے نام رکھتا ہے……؟
👈وکیل شیعہ (حق علی) صاحب مدعی عبدالرحمن معاویہ کے والدین بلکل ایسے ہی معاویہ نام سے متاثر ہوئے جیسے سیدنا حسن رضی اللہ عنہ سیدنا معاویہ رضی اللہ عنہ سے متاثر ہوئے تھے تبھی تو حکومت ان کے سپرد کر دی……
ورنہ آپ جیسے سبائی ٹولے کی تو کوشش تھی کہ جنگ لگی رہے اور صلح نہ ہو……
👈حق علی صاحب آپ کو ماتم، متعہ، نوحہ، اور اپنی شیعہ قوم کو جھوٹے افسانے سنانے ایسے خرافات سے وقت ملے تو سیدنا معاویہ رضی اللہ عنہ کے کارنامے پڑھیں……

👈شاید آپ بھول رہے ہیں یا لاعلمی ظاہر ہو رہی ہے……

بصورت الزام شیعہ حضرات کی کتب میں “معاویہ” بطور اسماءالرجال*

معاویہ صحابی رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم:

🔸1. *معاویۃ بن ام السلمی عدہ الشیخ فی رجالہ من اصحاب رسول اللہ*
معاویۃ شاگرد امیر المؤمنین حضرت علی رضی اللہ عنہ:

🔸2. *معاویۃ ابن صعصعۃ ابن اخی الخنف عدہ الشیخ فی رجالہ من اصحاب امیر المؤمنین*
معاویۃ ہاشمی حضرات میں:

🔸3. *معاویۃ بن عبداللہ بن جعفر الطیار ذاک ولد بعد وفات امیر المؤمنین*
(عمدۃ الطالب صفحہ 38 تحت عقب جعفر طیار)

♦️معاویۃ حضرت جعفر صادق رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے شاگردوں میں:

🔸1. *معاویۃ بن سعیدالکندی الکوفی عدہ الشیخ فی رجالہ ثارۃ مثل ما فی العنوان فی اصحاب الصادق*
(تنقیح المقال للمامقانی صفحہ 222 جلد 3 تحت یاب معاویۃ)……

🔸2۔ *معاویۃ بن سلمۃ النضری عدہ الشیخ من رجال الصادق*-
(تنقیح المقال للمامقانی صفحہ 223-224 جلد 3 تحت باب معاویۃ)……

👈کیا ان سب نے سیدنا معاویہ رضی اللہ عنہ سے متاثر ہو کر معاویہ نام رکھا……؟؟

♦️ *ایک لطیفہ*
ناظرین کرام نے مذکورہ بالا ناموں کو شیعہ کتب سے ملاحظہ فرما لیا ہے کہ عبداللہ بن جعفر الطیار رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی ایک فرزند کا نام معاویۃ تھا……
یہاں ہم ناظرین کی ضیافت طبع کے لیے ایک لطیفہ پیش کرتے ہیں- جو شیعہ کے اکابر علماء نے اس مقام میں ذکر کیا ہے……-
چنانچہ کتاب عمدۃ الطالب میں جمال الدین ابن عنبہ الشیعی ذکر کرتے ہیں کہ
(فولد) عبداللہ عشرین ذکراً و قیل اربعتہ و عشرین منھم معاویۃ بن عبداللہ کان وصی ابیہ و انما سمعی معاویۃ لان معاویۃ بن ابی سفیان طلب سنہ ذالک-فبذل لہ مانتہ الف درھم و قیل الف الف-
(عمدۃ الطالب فی انساب آل ابی طالب صفحہ 38 قت عقب جعفر الطیار- طبع ثانی-نجف)
ترجمہ: یعنی عبداللہ کے بیس یا چوبیس لڑکے پیدا ہوئے ہوئے ان میں میں سے ایک کا نام معاویۃ بن عبداللہ تھا اور وہ اپنے باپ کا “وصی”تھا اور اس کی وجہ تسمیہ یہ ہے کہ امیر معاویہ بن ابی سفیان نے عبداللہ بن جعفر کو ایک لاکھ درہم اور بقول بعض دس لاکھ درہم دیے تاکہ وہ اپنے بیٹے کا نام معاویۃ رکھے۔……
فلٰہذا عبداللہ بن جعفر الطیار نے اس وجہ سے سے اپنے بیٹے کا نام معاویۃ رکھا……
مندرجہ بالا روایت کی روشنی میں اکابر شیعہ کے نزدیک آل ابی طالب حضرات کی یہی کچھ حیثیت ہے کہ وہ چند درہم لے کر اپنی اولاد کے اسماء اپنے دشمنوں کے نام کے مطابق رکھ دیتے تھے……

🌷(سبحان اللہ🌷
یہ چیز واضح طور پر ہاشمی حضرات کی کردار کشی ہے جو شیعہ کے اکابر علماء نے بڑے عجیب طریقے سے درج کر دی ہے مگر یہ چیز ہمارے نزدیک ہرگز صحیح نہیں……

👈*علمائے انساب کے نزدیک*
علمائے انساب نے حضرت علی المرتضیٰ رضی اللہ تعالی عنہ کی صاحبزادی رملۃ کا نکاح اور شادی مروان بن الحکم کے لڑکے معاویۃ کے ساتھ ذکر کی ہے-عبارت ذیل ملاحظہ فرمائیں۔

🔸1-*وتزوج(معاویہ بن مروان بن الحکم)رملۃ بن علی بن ابی طالب بعد ابی الھیاج عبداللہ بن ابی سفیان بن الحارث بن عبدالمطلب*
(جمہرۃ النساب العرب لابن حزم صفحہ 87 تحت اولاد الحکم بن ابی العاص)

🔸2- *رملۃ بنت علی المرتضیٰ ابو الہیاج کے نکاح میں تھیں اس کے بعد ثم خلف علیھا معاویۃ بن مروان بن الحکم بن ابی العاص*
(نسب قریش لمصعب الزبیری صفحہ 45 تحت ولد علی بن ابی طالب)-

♦️👈مندرجہ بالا ہر دو حوالہ جات سے حضرت علی المرتضیٰ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی صاحبزادی رملۃ کا معاویۃ بن مروان کے نکاح میں ہونا بین طور پر ثابت ہے-فلٰہذا معاویۃ کا نام قابل طعن وتشنیع نہیں-

مختصر یہ ہے کہ ائمہ کرام کی اولاد، رشتہ داروں، تلامیذ اور خدام وغیرہ میں “معاویۃ” کا نام مروج و مستعمل اور متداول ہے
ان حقائق کے بعد حضرت معاویہ بن ابی سفیان رضی اللہ تعالی عنہ کے نام پر اعتراض و طعن قائم کرنے کا کوئی جواز باقی نہیں رہتا- انصاف درکار ہے۔

حقیقی فرقہ وارانہ کام تو آپ روافض شیعہ کا ہے جو اول روز سے دن رات اسلام کی جڑیں کھوکھلی کرنے میں سرگرم ہیں

♦️شیعہ وکیل (حق علی) جج سے……

شکریہ جج صاحب؛ اب میں (عبدالرحمٰن معاویہ ) سے اس کی دی ہوئی درخواست کے متعلق کچھ سوال کرنا چاہوں گا کیونکہ آپ نے فیصلہ اس درخواست کو پیش نظر رکھ کرکر نا ہے۔

🔸جج صاحب: اجازت ہے۔

وکیل شیعہ (حق علی): عبدالرحمٰن معاویہ صاحب آپ نے اپنی درخواست میں لکھا ہے کہ
“حضرت سیدنا ابوبکر رسول اللہ (ص) کے بلافصل جانشین اور خلیفہ ہیں، تمام صحابہ و اہلبیت کے امام ہیں۔ پوری امت مسلمہ کا یہ عقیدہ ہے کہ افضل البشر بعد از انبیاء سیدنا ابوبکر صدیق اکبر ہیں”
کیا آپ اب بھی اس پر قائم ہیں؟……

🔹مدعی عبدالرحمٰن معاویہ: جی اب بھی اس پر قائم ہوں……

♦️ وکیل شیعہ (حق علی ) : پوائنٹ ٹو بی نوٹڈ سر۔ان کا کہنا ہے کہ پوری امت مسلمہ کا عقیدہ ہے کہ ابوبکر تمام انبیاء کے بعد افضل البشر ہے۔۔۔تو کیا جناب آپ ملت تشیع کو رسول اللہ (ص) کی امت میں شمار کرتے ہیں /یا یہ کسی اور نبی کی امت ہیں……؟

🔹مدعی عبدالرحمٰن معاویہ: نے آنکھیں پھاڑتے ہوئے دیکھا اور جب ان کے وکیل (عمرفاروق) نے ان کی یہ حالت دیکھی تو فوراً کھڑا ہوا اور کہا………

جج صاحب: حق علی صاحب عدالت کا وقت ضائع کررہے ہیں کیس بلکل سیدھا ہے گستاخ صحابہ کو کڑی سے کڑی سزا ملنی چاہیے تاکہ بعد میں کوئی ہمارے صحابہ کے بارے میں گستاخی نہ کرے۔

🔸جج صاحب: آپ بیٹھ جائیں (سنی وکیل عمرفاروق)
حق علی آپ جاری رکھیں……… کیونکہ کیس کا فیصلہ درخواست میں درج کیے ہوئے موقف کو سامنے رکھ کر سنایا جائے گا۔

♦️شیعہ وکیل (حق علی ): شکریہ جج صاحب۔
جی تو عبدالرحمٰن معاویہ صاحب بتائیں آپ ملت تشیع کو امت رسول (ص) میں شمار کرتے ہیں یا نہیں؟۔۔۔کافی دیر خاموشی کے بعد جب جواب نہ ملا تو…………

♦️شیعہ وکیل (حق علی ): جج صاحب یہ کچھ نہیں بولیں گے کیونکہ انہیں بھی پتہ ہے کہ ملت تشیع امت میں ہے نہ کہ امت سے باہر کیونکہ امت رسول (ص) میں داخل ہونے کے لیے اللہ اس کے رسول (ص) اور انبیاء پر ایمان اور کتب انبیاء پر ایمان ، ملائکہ پر ایمان جنت و جہنم پر ایمان، محشر پر ایمان لانا ضروری ہے اور اس میں ایک بھی ایسا نہیں ہےجس کا ملت تشیع انکار کرے۔
جج صاحب: جی عبدالرحمٰن معاویہ صاحب ایسا ہی ہے ؟
عبدالرحمٰن معاویہ : جی بلکل ایسا ہی ہے 🔴

♦️ 📢سبحان الله کیا کہنے ایسے جج اور ایسی انصاف سے لبریز عدالت کے جو خود ہی جج خود ہی وکیل ہو جس میں اور جج کو چابی والا خرگوش بنایا ہوا ہے جو شیعہ وکیل کی غلط باتوں کو بھی صحیح کہتا جا رہا ہے♦️

🔹جواب اہلسنّت🔹
👈شیعہ وکیل (حق علی) صاحب سنیں
بیشک پوری امت مسلمہ کا عقیدہ ہے کہ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ بعد از نبی افضل البشر ، جانشین نبی، خلیفہ بلافصل ہیں۔

🔹👈شیعہ وکیل (حق علی) صاحب آپ نے اس عقیدے کو رد کرنے کے بجائے یہ سوال پوچھا کہ پوری امت مسلمہ میں ملت تشیع رسول اللہﷺ کی امت ہے یا کسی اور نبی کی؟
اس کے بعد اس فرضی مقدمے میں جانبداری کا مظاہرہ کرتے ہوئے اہلسنّت وکیل عمر فاروق کو لاجواب کردیا!!

🔹جبکہ حقیقت یہ ہے کہ “پوری امت مسلمہ” کا اطلاق “اکثریت رائے” پر ہوتا ہے، اس کا مطلب یہ نہیں ہوتا کہ امت کا ایک ایک فرد متفق ہے۔

ملت روافض شیعہ امت مسلمہ میں شامل ہی نہیں، امت مسلمہ کے تمام مسالک، فرقے اس عقیدے پر متفق ہیں سوائے اہل تشیع کے جو کہ امت مسلمہ میں شامل نہیں اس لئے جب یہ کہا جائے کہ پوری امت مسلمہ کا یہ عقیدہ ہے تو اس کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ امت مسلمہ کی اکثریت کا عقیدہ یعنی اس عقیدہ پر اجماع ہے۔
آگے شیعہ وکیل (حق علی) صاحب آپ نے ملت تشیع کو امت مسلمہ میں داخل کرنے کے لئے کچھ بنیادی ارکان بیان کئے ہیں۔
✅اللہ اور رسول پر ایمان
✅کتب انبیاء پر ایمان
✅ملائکہ پر ایمان
✅جنت و جہنم پر ایمان
✅محشر پر ایمان

🔹شیعہ وکیل صاحب یہ بات اظہر من الشمس ہے آپ کی معتبر ترین کتاب اصول کافی میں صحیح سند قول امام سے ثابت ہے کہ ملت تشیع موجودہ قرآن کریم پر ایمان نہیں رکھتی، اس کی تائید شیعہ جیّد علماء علامہ مازندرانی اور علامہ باقر مجلسی سے بھی ثابت ہے۔ اور تحریف قرآن عقیدہ آپ شیعہ کے ہاں ضروریات دین میں سے ہے اور دو ہزار روایات آپ کی تحریف قرآن پر ہیں تو قرآن کا منکر کیسے اپنے آپ کو امت مسلمہ میں شامل کرنے کی کوشش میں ہے؟؟
یہ حقائق اہل سنت علماء بخوبی جانتے ہیں مقدمہ فدک میں آپ (حق علی شیعہ وکیل صاحب) نے کم ظرفی اور شاطرانہ چال کا مظاہرہ کرتے ہوئے فرضی کردار عبدالرحمان معاویہ سے اقرار کرایا ہے کہ شیعہ ان ارکان پر مکمل ایمان رکھتے ہیں، جبکہ حقیقت یہ نہیں ہے۔
👈🔹شیعہ وکیل (حق علی) صاحب اگر صرف اللہ رسول، قیامت، کتاب پر بھی ایمان ہو اور ضرویات دین میں کسی ایک کا انکار بھی کر دیں تو انسان کافر ہو جاتا ہے آپ شیعہ تو بےشمار ضرویات دین کے منکر ہیں

🔵قارئین کرام کی تشفی کے لیے وکیل شیعہ حق علی کے عقائد بلکہ اثناء عشریہ ملت جعفریہ کے عقائد سے آگاہ کرتے ہیں تاکہ آپ بھی شیعہ کو بھی ان عقائد سے معلوم ہوں
✍یہ دیکھیں کتب میں ساتھ لایا ہوں

🔮اللہ تعالیٰ کے بارے شیعہ عقائد پڑھیں

🔸1۔۔۔ اللہ تعالی کبھی کبھی جھوٹ بھی بولتا ہے اور غلطی بھی کرتا ہے ۔۔۔
( اصول کافی ج/1۔۔ ص/8 یعقوب کلینی)

🔸2۔۔ میں اس خدا کو رب نہیں مانتا جس نے عثمان و معاویہ رض عنھما جیسے بدقماشوں کو حکومت دی __
( کشف الاسرار : ص / 107 مصنف خمینی )

🔸3۔۔۔ نہ ہم اس رب کو مانتے ہیں اور نہ اس رب کے نبی کو مانتے ہیں جس کا خلیفہ ابوبکر رض ہو _
( انوار النعمانیہ ج۔۔2/ ص۔۔278 طبع ایران )

🔸4۔۔ اللہ تعالی نے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو ڈانٹ پلائی کہ اپ ہر صورت میں خلافت علی رض کا اعلان کریں _ ( تفسیر صافی :1/458 )___!!

🔮رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے شیعہ عقائد پڑھیں

🔸1۔۔ حضرت عائشہ کے حسن و جمال نے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو دیوانہ بنا رکھا تھا
( کلید مناظرہ۔۔ص: 311 )

🔸2۔۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم ، علی رض اور عائشہ رض ایک چارپائی پر سوتے تھے _
( سلیم بن قیس کوفی ۔۔ ص : 197 )

🔸3۔۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم حضرت عائشہ رض سے حالت حیض میں جماع کیا کرتے تھے _
تحفہ حنفیہ ۔۔ص:272/ غلام حسین نجفی جامعہ المنتظر لاہور )

🔸4۔۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی بعض بیویاں ننگی سوتی تھیں _ ( تنزیہ الانساب حصہ اول غلام حسین نجفی )

🔸5۔۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے ظاہر و باطن میں تضاد تھا _ ( تفسیر عیاشی ج2 / ص 101 )

🔸6۔۔ امام مہدی جب ائے گا تو ننگا ہوگا اور اس کے ہاتھ پر سب سے پہلے بیعت کرنے والے محمد ہوں گے _
( حق الیقین حصہ دوم ۔۔۔ ص:347۔۔ باقر مجلسی )
نعوذ باللہ من ذالک !

🔮توہین انبیاء کرام علیہم السلام کے بارے شیعہ عقائد

جج صاحب شیعہ عقائد کا مطالعہ کیجئیے اور خود ہی فیصلہ کیجئیے کہ ان عقائد کے باوجود بھی یہ گروہ مسلمان کہلانے کا حق دار ہے یا امت مسلمہ میں شامل ہیں۔۔۔۔؟؟

🔸1۔۔ تمام انبیاء زندہ ہو کر حضرت علی رض کے ماتحت ہو کر جہاد کریں گے
( تفسیر عیاشی ج1 / ص181 )

🔸2۔۔ حضرت یونس علیہ السلام نے ولایت علی کو قبول نہ کیا جس کی وجہ سے اللہ تعالی نے انہیں مچھلی کے پیٹ میں ڈال دی
( حیات القلوب ج1 / ص459 )

🔸3۔۔ مرتبہ امامت مرتبہ پیغمبری سے بالا تر ہے _
( حیات القلوب ج 3/ ص 2 )

🔸4۔۔۔ پیغمبر حضرت علی کے در کے بھکاری ہی
(خلقت نورانیہ ج 1 / ص 201 طالب حسین کرپالوی )

🔸5۔۔ حضرت علی رض کی خلافت اول کا منکر تمام انبیاء کی نبوت کا منکر ہے
( احسن الفوائد فی شرح العقائد ج2 / ص 201 شیخ محمد حسین سرگودھا)

🔮قران مجید کے بارے شیعہ عقائد پڑھیں

🔸1۔۔ موجودہ قران تحریف شدہ ہے _
حیات القلوب :3 ، ص 10 ۔۔ مصنف مرزا بشارت حسین )

🔸2۔۔ شراب خور خلفاء کی خاطر یہ قران تبدیل کردیا گیا _ ( ترجمہ مقبول : 479 ۔۔ مقبول حسین دہلوی )

🔸3۔۔ اس قران میں کفر کے ستون کھڑے کر دئیے گئے _
( تفسیر صافی : 1/ مقدمہ / ص: 30 مطبوعہ تہران )

🔸4۔۔ منافقین نے قران میں سے بہت کچھ نکال لیا ہے _
( احتجاج طبری : ج 1 / ص : 382 )

🔸5۔۔ امام مہدی جب ائےگا تو اصلی قران لے کر ائے گا _
( احسن المقابل ص: 332 صفدر حسین نجفی بانی جامع المنتظر لاہور )

🔸6۔۔ اصلی قران جو حضرت علی نے جمع کیا تھا وہ مہدی لے کر ائیں گے _
( انوار النعمانیہ ۔۔ ج:2 / ص:320 مطبوعہ تہران طبع جدید )
🔸7۔۔ قران میں اگر تحریف نہ ہوتی تو اماموں کے نام موجود ہوتے _
( تفسیر عیاشی ۔۔ ج1 /ص 13 )

🔸8۔۔ شیعہ اس قران کی تلاوت اس لئے کرتے ہیں کہ امام نے ہمیں کہا ہے کہ جب تک مہدی نہ ائے اس غلط قران کو پڑھتے جاو _
(انوارالنعمانیہ: ج2/ص323:324 )

👈جی ہاں جج صاحب آپ ان عقائد والو کو امت مسلمہ میں شمار کرتے ہیں؟؟ یا اس دنیا میں کوئی ادنیٰ مسلمان بھی ان عقائد کے حامل کو مسلمان کہے گا؟؟

🔹جج صاحب: لرزتے ہوئے نہیں جی یہ تو کفر ہی کفر ہے

👈شیعہ وکیل (حق علی) صاحب کیوں کبھی کھولی آپ نے اپنی کتب اور پڑھا یہ کفر یا ایسے جوش آ گیا تھا مقدمہ فدک لکھنے کا……… اب پہلے اپنے آپ کو مسلمان ثابت کریں اور ہمارے مزکورہ دلائل جو آپ کے عقائد ہیں ان کا رد کریں پھر اگلی پیشی پر آنا بات کرنے