صحابہ کا مقام احادیث پاک میں

صحابہ کا مقام احادیث پاک میں
زبانِ رسالت سے صحابہ کے چنندہ ہونے کی خوشخبری دی گئی،جن میں سے چند احادیث کا ترجمہ یہاں پیش کیا جارہا ہے:
“اِنَّ اﷲَ اخْتَارَ اَصْحَابِیْ عَلٰی العٰالَمِیْنَ سِوٰی النَّبِیِّیْنَ وَالْمُرْسَلِیْنَ…. وَقَالَ فِیْ اَصْحَابِیْ کُلُّھُمْ خَیْرٌ”۔
(مجمع الزوائد:۱۰/۱۶)
اﷲ تعالیٰ نے نبیوں اور رسولوں کے بعد ساری دنیا سے میرے صحابہ کو منتخب فرمایا اورفرمایا: میرے سب ہی صحابہ بھلائی والے ہیں۔
“اِنَّ اﷲَ اخْتَارَنِیْ وَاخْتَارَ لِیْ اَصْحَابِیْ…الخ”۔
(الفتح الکبیر فی ضم الزیادۃ إلی الجامع الصغیر، باب حرف الھمزۃ، حدیث نمبر:۳۲۲۴، صفحہ نمبر:۱/۲۹۷)
اﷲ نے میرا انتخاب فرمایا اور میرے لیے میرے صحابہ کا انتخاب فرمایا ۔

“خَیْرُ النَّاسِ قَرْنِیْ ثُمَّ الَّذِیْنَ یَلُوْنَھُمْ ثُمَّ الَّذِیْنَ یَلُوْنَھُمْ”۔
(بخاری، باب لایشھد علی شھادۃ جور، حدیث نمبر:۲۴۵۸)
لوگوں میں بہترین میرے قرن والے ہیں؛پھر وہ جو ان کے بعد ہیں، پھر وہ جو ان کے بعد ہیں۔
حافظ ابن ِ حجر عسقلانی رحمہ اللہ نے فتح الباری میں لکھا ہے :”قرنی” سے مراد صحابہ ہیں، نیز بخاری میں باب صفۃ النبی صلی اللہ علیہ وسلم(کتاب الفضائل ۷/۳) میں ہے کہ
“بُعِثْتُ فِیْ خَیْرُ الْقُرُوْنِ بَنِیْ آدَمَ”۔
ابن آدم کے سب سے بہترلوگوں کے درمیان مجھے بھیجا گیاہے۔
اسی لیے حضرت ابن ِ مسعودؓ فرمایا کرتے تھے: صحابۂ رسول اس امت کے سب سے افضل افراد تھے، جو دل کے اعتبار سے بہت نیک،علم کے لحاظ سے سب سے پختہ اور تکلفات کے اعتبار سے سب سے زیادہ دور رہنے والے تھے۔
(رزین،مشکوٰۃ:۱/۳۲)
حافظ ابن عبدالبر نے “الاستیعاب” اور علامہ سفارینی نے “شرح الدرۃ المضیئہ” میں لکھا ہے کہ جمہور ِ امت کی رائے کے مطابق صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین انبیاء علیہم السلام کے بعد سب سے افضل ہیں۔
(مقدمۃ لاستیعاب تحت الاصابۃ:۱/۲)