شیعوں کی طرف سے حضرت آدم علیہ السلام کی گستاخی (اہل تشیع کی صحیح روایت)

 رافضیوں کے نزدیک حضرت آدم علیہ السلام کافر ھیں ,, العیاذ بااللہ

(باب) * (في أصول الكفر وأركانه) 

1 – الحسين بن محمد، عن أحمد بن إسحاق، عن بكر بن محمد، عن أبي بصير قال: قال أبو عبد الله (عليه السلام): أصول الكفر ثلاثة: الحرص، والاستكبار، والحسد، فأما الحرص فان آدم (عليه السلام) حين نهي عن الشجرة، حمله الحرص على أن أكل منها وأما الاستكبار فإبليس حيث أمر بالسجود لآدم فأبى، وأما الحسد فابنا آدم حيث قتل أحدهما صاحبه

الكافي – الشيخ الكليني – ج ٢ – الصفحة ٢٨٩

ابو عبد اللہ علیہ السلام فرماتے ھیں

اصول کفر تین ہیں ( 1) حرص ( 2) تکبر ( 3)  حسد 

 بھرحال حرص بیشک آدم علیہ السلام نے کی جب انھیں درخت سے روکا گیا تھا، حرص نے آدم علیہ السلام کو اسکے کھانے پر آمادہ کیا 

اور تکبر شیطان نے کیا جب اسے آدم علیہ السلام کے سجدہ کا حکم کیا گیا۔

حسد آدم علیہ السلام کے بیٹوں( ھابیل, قابیل) نے کیا جب ایک نے دوسرے کا قتل کیا۔

( العیاذ بااللہ)

حوالہ جات شیعہ کتب سے

👇👇👇👇👇👇👇👇

یہ روایت شیعہ کی اصول کی پہلی کتاب کافی کی ہے

جسکی سند کو مرآة العقول میں باقر مجلسی نے الصحیح لکھا ہے

آنلائن لنک  

بحار الأنوار – العلامة المجلسي – ج ٦٩ – الصفحة ١٠٤

آنلائن لنک  

موسوعة أحاديث أهل البيت (ع) – الشيخ هادي النجفي – ج ٣ – الصفحة ٢٩٦

آنلائن لنک  

ميزان الحكمة – محمد الريشهري – ج ٣ – الصفحة ٢٧١١

آنلائن لنک  

مستدرك سفينة البحار – الشيخ علي النمازي الشاهرودي – ج ٩ – الصفحة ١٢٨

آنلائن لنک  

الأمالي – الشيخ الصدوق – الصفحة ٥٠٥

آنلائن لنک  

اس پوسٹ کا شیعوں کی طرف سے رد لکھا گیا تھا۔ الحمدللہ اس رد کی اصل حقیقت بمعہ اسکینز کے ساتھ اہلسنت پر لگائے گئے اعتراضات کا جواب پڑھیں۔

توہین حضرت آدم علیہ السلام (شیعہ کی صحیح روایت) اور اہلسنت پر اعتراض کا تحقیقی رد